بلاگخوش آمدید

شیطان کی دھوکے بازی

ہم آسمان کی بادشاہت سے شروع کرتے ہیں جہاں سے تخلیق شروع ہوئی تھی۔ شیطان نے اماں حوا سے کہا: ” اگر تم اِس درخت کے سیب کو کھاؤ گی تو تم مرو گی نہیں۔ خُدا نے جھوٹ کہا ہے۔ اِسے کھا لو اور اِس کے کھانے کے بعد تم خُدا جیسے ہو جاؤ گے”۔

تو حوا نے اُسے کھا لیا اور زندہ رہی۔ پھر اُس نے اِسے آدم کو دیا۔ اور وہ بھی زندہ رہا۔ لیکن پھر اُن دونوں نے یہ محسوس کیا کہ جو کچھ اُنہوں نے کیا ہے وہ بہت نقصاندہ ہے، کہ اُنہوں نے ناقابل یقین طور پر خُدا کے ساتھ اپنا اصل رشتہ تباہ کر دیا اور اُس وقت سے اُنہوں نے اپنے آپ کو اور پوری اِنسانیت کو موت کے تابع دار بنا لیا۔ تو جسمانی طور پر وہ ایک ایسی تخلیق بن گئے کہ جسے موت ضرور آئے گی اور ایسا کوئی راستہ نہیں تھا کہ وہ اِس سب کو دوبارہ ٹھیک کر لیتے۔ بلکہ اُن کو آسمان کی بادشاہت سے نکال دیا گیا۔ اور تب سے ہم سب گناہ کے غلام ہیں اور ہمیں اِسے ٹھیک کرنے کے لئے محنت کرنی ہے۔

اُن کے معافی مانگنے سے سب کچھ ٹھیک نہیں ہوا۔ ہر چیز بدل گئی تھی اور وہ سب ٹھیک نہیں تھا۔ اور اِس لئے یسوع آیا، جو خُدا کا بیٹا ہے اور اُس نے ہمارے گناہوں کا کفارہ کیا اور سب کچھ ٹھیک کیا۔

لیکن اِن سب میں سب سے دلچسپ بات یہ ہے کہ ہم آج کے دور میں وہ سب اجزاء دوبارہ سے دیکھ رہے ہیں جو پہلے ہو چکے ہیں۔ اور نا قابل یقین طور پر، لوگ پھر سے ایک دوسرے کو نقصان پہنچا رہے ہیں۔ شیطان سرگوشی کرتا ہے کہ ” تم اُس پر ایمان نہیں رکھنا چاہتے جو خُدا نے بائبل میں کہا ہے۔ اگر تم اُن قوانین کو بھول جاتے ہو جو جنسیت کے بارے میں ہیں اور اِس کے بارے میں ہیں کہ تم مرد اور عورت ہو اور کہ تمہیں خُدا کی عبادت کرنی چاہیے تو تمہیں کچھ بھی نہیں ہو گا “۔ اِس سب کے بعد، اُس نے اپنا مقصد پورا کرنے کی بہت کوشش کی کیونکہ اِس معاملے میں اِنسانوں کو ہمیشہ سے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے، لیکن آپ کے پاس اِن سے لڑنے کا علم ہے تاکہ آپ سب کچھ ٹھیک کر لیں۔

جیسے ترکی کے لوگ کرسمس کے لئے صف بندی کرتے ہیں۔ ہم اِن سب بے معنی باتوں پر یقین رکھتے ہیں۔ ہم اپنے آپ سے یہ کہتے ہیں کہ ہمارے پاس جدید ذہانت، جذبات اور رُحانیت ہے اور ہم اِس دُنیا پر اختیار حاصل کر سکتے ہیں اور اِسے بہتر بنا سکتے ہیں۔ ہم ایک دوسرے کو یقین دہانی کرواتے ہیں کہ یہ سب کہانیاں ہم نے خود بنائی ہیں اور کہ خُدا، اگر اُس کا وجود نہیں تھا تو اِس کا مطلب ہے کہ وہ ہے ہی نہیں۔

اور تو ہم بہت شدید طریقے سے اِنتشار اور اُلجھنوں کی گہرائی میں چلے گئے ہیں۔

یہ ٹھیک کہا گیا ہے کہ دُنیا میں کوئی چیز نئی نہیں۔ مسیح ہمیں نجات دینے کے لئے آیا اور ہمیں اُس زندگی کے لئے بحال کیا جو آدم اور حوا نے شیطان کی بات سُننے سے پہلے گزاری تھی۔ یہ ایک پیشکش ہے کہ جسے ہم قبول یا مسترد کر سکتے ہیں۔ لیکن آپ یہ سوچیں کہ وہ سب ہونے کے بعد ہم نے شاید بہت کچھ سیکھا ہے۔ ظاہری طور پر نہیں، البتہ، کیونکہ لوگ ابھی تک اُس جھوٹ کو ترجیح دیتے ہیں کہ ہم خود اِس دُنیا کو بہتر بنا سکتے ہیں، کہ ہم تمام قوانین کو ختم کر سکتے ہیں اور تخلیق کو دوبارہ بنا سکتے ہیں۔

یہ ایک اچھا اِنتخاب نہیں ہے، کیونکہ ناگزیر طور پر اِس کا نتیجہ دوبارہ سے وہی ہو گا۔ مشکلات کے بغیر زندگی بہتر تو نہیں ہو سکتی لیکن اِس کے بغیر اِس کا نتیجہ صرف افراتفری اور موت ہو سکتی ہے۔

پھر بھی، مسیح نے جو پیشکش کی ہے وہ ابھی تک ہے۔ اب یہ ہمارا فیصلہ ہے کہ ہم شیطان کے جھوٹ کو قبول کرلیں کہ ہم اِس دُنیا پر حکومت کر سکتے ہیں اور پھر مر جائیں گے، یا ہم خُدا کی پیروی کرنے کو چنتے ہیں جس میں ہم اُس کے حکموں کی فرمابرداری کرتے ہیں اور اُس کے ساتھ زندگی گزارتے ہیں اور اِس عمل میں ہم دُنیا کو ایک بہتر جگہ بنا سکتے ہیں۔

یہ بہت آسان ہے، فیصلہ آپ پر ہے کہ آپ کیا چُننا چاہتے ہیں۔


ShareShare on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+Email this to someone
Previous post

اِسلام میں غیر مسلمانوں کا درجہ

Next post

اِیسٹر کی اہمیت

No Comment

Leave a reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Time limit is exhausted. Please reload CAPTCHA.