بلاگخوش آمدید

اگر خدا آج زمین پر آ جائے

جب ہم خداوند کے بارے میں سوچتے ہیں تو ہم یہ تصور کرتے ہیں کہ ایک قدآور، خوبصورت اسرائیلی مرد جو سفید چوگا پہنے اور ہاتھ پھیلائے کھڑا ہے. جیسا کہ بہت سی تصاویر میں خداوند کو پیش کیا گیا ہے. لیکن کیا کبھی آپ نے ایسا سوچا ہے کہ کیسا لگے گا اگر قادر خُدَا آج زمین پر چلتا پھرتا نظر آئے؟ آپ اُس وقت ملنے والی خوشی اور آخری وقت کے بارے میں مت سوچئے کیونکہ یہ یسوع مسیح کا ایک اچانک حیران کرنے والا دورہ ہو گا. جب بھی میں یہ سوچتا ہوں کہ خداوند میرے گنہگار ہاتھ اپنے زخمی ہاتھوں میں لیے کھڑا ہے تو یہ میرے دل کو بہت سکون بخشتا ہے. کتنا شاندار اور خوفزدہ منظر ہو گا جب ہم اُس قادر مخلوق کو دیکھیں گے جس نے ہماری خاطر صلیب پر جان دی، اپنا خون بہایا اور آخری دفعہ جب وہ زمین پر تھا تو ہم نے اُس کے جسم کے ایک ایک حِصے کو زخمی کیا تھا۔ اُس نے ہمارے گناہوں کا عطیہ دینے کے لئے اپنا خون بہایا۔

اگر وہ اب زمین پر آیا تو پھر اس کا دل ہی زخمی ہو گا. ہم نے کیوں خداوند یسوع مسیح کو بار بار زخمی کرنے کی ذمہ داری اٹھا رکھی ہے؟

کلام بتاتا ہے کہ یسوع صرف اُس وقت ناراض ہوا جب اس نے عبادت گاہوں کو کاروبار کہ طور پراستعمال ہوتے دیکھا. اس نے اپنا منہ پھیر لیا کیوںکہ لوگ اُس کے باپ کے گھر میں بدعنوانی کے کام کر رہے تھے. کیا ہم یہ تصور کر سکتے ہیں کہ وہ آج کیا کرے گا جب وہ ہمارے رہنماؤں کی منافقت دیکھے گا، جو گرجا گھروں کو صرف پیسہ کمانے کے لئے استعمال کر رہیں ہیں؟ وہ ان گرجا گھروں میں بھی صلیب کا نشان دیکھے گا جن سے اُس کا کوئی تعلق نہیں ہے، وہ گرجا گھر جو باپ، بیٹا، روح القدس اور اس کی جان دینے کی وجہ کے بارے میں بھول چُکے ہیں اور وہ منافق جو صرف دنیا کو دکھانے کے لئے خُدَا کے کام کرتے ہیں جب کہ حقیقت میں ایسا کچھ نہیں ہے. وہ بہت بری طرح دکھی ہوں گے جب وہ دیکھیں گے جسم فروش عورتوں کو، نشاباز اور بدعنوان سیاسی لوگوں کو، ان لوگوں کو جو خُدَا کو بیچتے ہیں اور ان سب لوگوں کو جو روز اپنے گناہوں کی وجہ سے اُس کو مصلوب کرتے ہیں۔

اگر خداوند یسوع مسیح آج آ جائے تو کیا ہم اُس کا چہرہ پہچان سکیں گے؟ کیا ہم اُس کو اپنے گھروں میں داخل ہونے دیں گیں یا اُس کو مایوس کریں گیں؟ کیا ہمیں اُس کا نام بھی پتا ہو گا؟ بہت سے لوگ ناچنے گانے اور ساحلوں پر جا کر لطف اندوز ہونے کو گناہ مانتے ہیں. لیکن یسوع کو ان چیزوں سے نفرت نہیں ہے. اگر ہم صاف ضمیر کے ساتھ ساحلِ سمندر پر صرف قدرت کی خوبصورتی سے لطف اندوز ہونے جاتے ہیں تو ہمیں نہ جانے کی کوئی بھی وجہ نہیں ملتی. خُدَا نے ہمیں کبھی بھی ناچنے اور گانے سے منع نہیں کیا ہے تب تک جب تک کہ یہ چیزیں ہر وقت ہم پر حاوی نہ ہوں. لیکن بہت سے لوگ اُس کے پیار اور فضل کا فائدہ اٹھا کر شیطان کے آگے گِر جاتے ہیں. خُدَا نے جن لوگوں سے محبت کی، ان کی رہنمائی کے لئے نبی اور پیغمبر بھیجے، لیکن لوگوں نے ان کے الفاظ سے یہ کہہ کر انکار کر دیا کہ وہ خُدَا کو تھوڑا وقت دے کراس کو فقیر نہیں بنانا چاہتے. یسوع نے کبھی نہیں کہا کہ اس کے ساتھ چلنا آسان ہے اور نہ کبھی یہ کہا کہ جزوی طور پر اس کے ساتھ چلیں. اگر ہم اُس میں ہیں تو ہمیں اُس میں پورا ہونا ہوگا اور وہی کرنا ہوگا جو وہ ہمیں کہے گا ورنہ وہ ہمیں مسترد کر دے گا. خدا نے وعدہ کیا ہے کہ آسمان کے پرندے بھی بھوک سے نہیں مریں گے. تو جب تک ہم اُس کے قابل ہیں وہ ہمارے لئے کیا نہیں کرے گا؟ اگر خُدَا آج آ جائے تو وہ ہمارے حال دیکھ کر بہت روئے. اس لئے ہمیں ضرورت ہے کہ ہم فوری طور پر سیدھی راہ اختیار کریں اور اپنے گناہوں سے خُدَا کو اور تکلیف نہ پہنچائیں۔


ShareShare on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+Email this to someone
Previous post

یسوع کون ہے ؟

Next post

توبہ کا وقت

No Comment

Leave a reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Time limit is exhausted. Please reload CAPTCHA.