آج کا پَیغامخوش آمدید

جیسا کرو گے ویسا بھرو گے

مسیح کی تعلیم میں ہم سیکھتے ہیں کہ کیسے لوگوں کو ایک دوسرے کے ساتھ تعلق رکھنا چاہیے، یسوع نے یہ حکم دیا: “پَس جو کچھ تم چاہتے ہو کہ لوگ تمہارے ساتھ کریں وہی تم بھی اُن کے ساتھ کرو”۔

نمایاں طور پر، کسی نے بھی اِس سے پہلے ایسا نہیں کہا تھا، کیونکہ سوچنے والے اور مذہبی اساتذہ کا خیال تھا کہ یہ سب بہت زیادہ پوچھا جا رہا ہے۔ یسوع کی وزارت سے کچھ سال پہلے، یہودی ربیبی ہیلی بہت دخل اندازی کرنے لگا کہ جب اُس نے اپنے کمانڈر سے منفی انداز میں بات کی کہ: ” جو کچھ تم چاہتے ہو کہ لوگ تمہارے ساتھ کریں وہ تم اُن کے ساتھ وہ نہ کرو”۔

یسوع اِس بات کی وضاحت کرتے ہیں کہ ”یہ سب قانون اور نبیوں کے حوالوں سے ہے”۔ دوسرے الفاظ میں، یہ سب اِنسانی رشتوں کے اصول اور یہودیوں کے قانون کے مطابق ہیں اور یہ سب یہودیوں کے پیغمبروں کی لکھی ہوئی باتیں ہیں۔

یسوع کے مطابق، یہ اصول اچھی زندگی کی بنیاد ہیں، کہ جو اِنسان کی اصل کامیابی کا ذریعہ ہیں۔ دوسری طرف، کسی کے بارے میں فیصلہ کرنا، اِس بات پرمشتمل ہوتا ہے کہ اُنہوں نے دوسروں کے ساتھ کیا سلوک کیا ہے۔ وہ بہت سے قانون جن میں آنکھ کے بدلے آنکھ اور دانت کے بدلے دانت کے اصول پائے جاتے ہیں وہ متوازن اصول اور تناسب سزا دینے والے قانون ہوتے ہیں۔ لیکن اگر ہم خود کو جج، جیوری اور اعدام بنالیں گے تو اِس طرح ہم یسوع اور خُدا کے حکم کو نہیں پورا کر سکیں گے۔

اگر ہم چاہتے ہیں کہ دوسری زندگی میں ہمارا اور ہمارے گناہوں کا فیصلہ نہ کیا جائے، تو اِس کے لئے ضروری ہے کہ ہم دوسروں کے ساتھ ایسا سلوک کریں جیسا ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے ساتھ کیا جائے۔ پھر فیصلے کے دِن ہمارے ساتھ بھی ایسا ہی سلوک کیا جائے گا جیسا ہم دوسروں کے ساتھ کرتے ہیں۔ جس کا مطلب یہ ہے کہ ہمارے ساتھ ایسا سلوک کیا جائے گا جیسا ہم چاہتے ہیں!

دوسری طرف، اگر ہم کسی دوسرے کی طرف سے غضب بن کر لوگوں کے ساتھ ایسا سلوک کریں گے، تو فیصلے کے دن بھی ہمارے ساتھ ویسا ہی سلوک کیا جائے گا جیسا ہم دوسروں کے ساتھ کرتے ہیں۔


ShareShare on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+Email this to someone
Previous post

کیا آپ ایسے مسیحی ہیں جو اپنے گناہوں کے بوجھ طلے دبے ہوئے ہیں

Next post

آج کا پیغام : کلام میں خوشخبری

No Comment

Leave a reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Time limit is exhausted. Please reload CAPTCHA.