بلاگخوش آمدیدگراہم فورڈ

ایک نظم: نامعلوم محبت

کئی مہینوں پہلے تم ایک نامعلوم ہستی تھے،

اب تم وہ سب ہو جو خُدا نے مجھے کہا تھا کہ تم ہو گے،

میں محبت کی وجہ سے غالب آیا، ایک ایسی محبت جو سب سے الگ ہے، ایک ایسی محبت جو ہر سوچ سے اوپر ہے، ایک ایسی محبت جو مجھ سے کوئی بھی نہیں چھین سکتا۔

میں آپ کو دیکھ سکتا ہوں اور میرے پاس الفاظ نہیں ہیں کہ میں آپ کو وہ بتا سکوں جو میں آپ کو بتانا چاہتا ہوں۔

میرے دِل میں آپ کے لئے نامعلوم فخر ہے۔

میں نامعلوم محبت محسوس کر رہا ہوں کہ اُس پرُجوش حفاظتی محبت میں میرے قربانی دینے سے تمہیں وہ سب ملے جو تم چاہتے ہو۔

میں تمہیں گھیرے میں لونگا تاکہ اُن تمام بُرے ہاتھوں اور خیالوں سے تمہاری حفاظت کروں۔

میں سردی سے تمہاری حفاظت کرونگا۔

میرا ایمان ہے کہ خُدا تمہارے راستے میں تمہاری حفاظت اور رہنمائی کرے گا جیسے کہ اُس نے فیصلہ کیا ہے۔

میں وہ شخص بنونگا جو خُدا مجھ سے چاہتا ہے کہ میں تمہارے لئے بنوں۔

ایک ایسا شخص جس پر تمہیں بہت فخر ہوگا۔

تم فخر کرو گے اور خوش رہو گے۔

تم وہ سب کچھ بن جاؤ گے جو آسمان سے قوس و قزاح تک ہے،

جو گرمیوں کے سورج سے موسم خزاں کی زمین تک ہے،

جو سردیوں کے جنگلات سے موسم بہار کے چراگاہ تک ہے،

میں روزانہ خُدا کا شکرادا کرتا ہوں کہ اُس نے مجھے ایسی زندگی بخشی۔

اُس نے مجھے ایسی زندگی بخشی جس پر مجھے فخر ہے۔

تم وہ سب کچھ ہو جسے میں محبت کر سکتا ہوں اور جس کی میں خواہش کرسکتا ہوں اور تم اِس سے بھی بڑھ کر ہو۔

خُداوند ہمیں سیدھا راستہ دکھائے گا۔

اپنا منہ کھولیں اور زیادہ کھولیں اور خُداوند کو اِسے اپنی برکات کے ساتھ بھرنے دیں۔ آمین!


ShareShare on FacebookTweet about this on TwitterShare on Google+Email this to someone
Previous post

خدا شفاء دیتا ہے

Next post

راکھ کے بُدھ سے کیا مرُاد ہے؟

No Comment

Leave a reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Time limit is exhausted. Please reload CAPTCHA.